G. Rasool’s Poetry

file

نوجواں کے نام

نوجواں کے نام

وصال موسم گزر نہ جاءیں

وصال موسم گزر نہ جاءیں

بلا  عنوان

بلا عنوان

بھری بزم میں میں تنہا کھڑا ہوں

بھری بزم میں میں تنہا کھڑا ہوں

عجب رشتہ ہے محبت کا

عجب رشتہ ہے محبت کا

کیوں روٹھا ہے وہ مجھ سے

کیوں روٹھا ہے وہ مجھ سے

کوئی اجنبی ایسے ملا
صدیوں سے ہو جیسے آشنا
میری تھکن میری جہد
میری آرزو میری جستجو
ملتی تھی اس کے حال سے
تھا یہ اتفاق کمال سے
01092015GR
=====================

مجھے چھوڑ کے کہنا اس کا
کہ مل جائیں گے ہزاروں تم جیسے
حیرت ہوئی مجھے اس مغرور کے لفظوں پہ
چھوڑ کے بھی تلاش ہے مجھ جیسے کی
02092014GR
============================
سارے سنگتی ہوندن بختاں دے بھلا کدوں کوئی درد ونڈیندا اے
ویکھ کے وقت زوالاں دے ماں جایا وے منہ چا وٹینڈا اے
کوئی ہک ادھ خون ہلالیاں دا ڈھلے بخت اچ آ سملیندا اے
رکھ تقویٰ رب دی ذات اتے جہڑا اوکھے وقت ہٹیندا اے
18022016GR
======================================================

6 thoughts on “G. Rasool’s Poetry

Leave a Reply to shahid Bourana Cancel reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>